یہ ہی پرفارمنس دینا ہوگی

دنیا بھر میں بسنے والے شائقین کرکٹ کے لیے وہ گھڑی آہی گئی جس کا انہیں انتیظار تھا۔ ورلڈ ٹی 20 کپ 2016 جوکہ پہلی مرتبہ انڈیا میں منعقد کیا جارہا ہے اس کا باقاعدہ آغاز ہوگیا ہے۔ ورلڈ ٹی 20 کپ 2016 ورلڈ رینکنگ کی 10 ٹاپ ٹیموں کو دو گروپس میں تقسیم کیا گیا ہے ، گروپ اے میں ساوتھ آفریقہ ، انگلینڈ ، سری لنکا ، ویسٹ انڈیز اور افغانستان شامل ہیں ، گروپ بی میں اسٹریلیا ، انڈیا ، پاکستان ، نیوزی لینڈ اور بنگلہ دیش شامل ہے۔ ورلڈ ٹی 20 کا پہلا میچ 15 مارچ کو گروپ بی کی ٹیمز بھارت اور نیوزی لینڈ کے درمیان کھیلاگیا ، نیوزی لینڈ نے پہلے کھیلتے ہوئے مقررہ 20 آورز میں 127رنز کا ہدف دیا جس کے تعاقب میں بھارت کی پوری ٹیم 79 پر ڈھیر ہوگئی اور اس طرح باآسانی نیوزی لینڈ نے اپنے پہلے میچ میں بھارت کو شکست دے کر ٹورنامنٹ میں اپنا بہترین آغاز کیا۔ 16 مارچ 2016 ورلڈ ٹی 20 کا دوسرا میچ پاکستان اور بنگلہ دیش کے درمیان کلکتہ میں ہوا جس میں پاکستان کے کپتان شاہد آفریدی نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا اور اس فیصلے کو درست ثابت کیا پاکستانی بلے بازوں نے ، پاکستان ٹیم نے اپنا آئیڈیل انداز میں کیا بلے بازوں نے آتے ہی وکٹ پر چھانے کے لیے دھواں دار آغاز کیا شرجیل خان ٹیم کو اچھی شروعات دے کر ٹیم کے 26 کے مجموعی اسکور پر پویلین لوٹ گئے جسکے بعد محمد حفیظ اور احمد شہزاد نے ٹیم کو لیڈ کیا اور دونوں نے اپنی اپنی نصف سینچری مکمل کی اور 95 رنز کی پارٹنر شپ بناکر بڑا ٹوٹل بنانے میں اہم کردار ادا کیا ، اور پھر آخری 5 آورز میں شاہد آفریدی کی جارحانہ بیٹنگ نے پاکستان ٹیم کی پوزیشن کومزید مضبوط کیا اور پاکستان 202کا بڑا ٹارگٹ بنانے میں کامیاب ہوا۔۔ پاکستان کی جانب سے شرجیل خان 18 ، حفیظ 64 ، احمد شہزاد 52 ، اور شاہد آفریدی 49رنز کے ساتھ نمایاں رہے۔

CdrEaCgWwAElZCg.png

CdrAZ3LW4AAAsh2.jpgCdrAZ3jW4AAp0Ew.jpg

بنگلہ دیش کی ٹیم 202 کے بڑے اسکور کے تعاقب میں بنگلہ دیش شروع سے ہی پریشر میں رہی بنگلہ دیش کو سنبھلنے کا صحیح طرح موقع نہ مل سکا ، محمد عامر نے پہلے آور میں وکٹ لےکر پاکستانی بالنگ کو اعتماد دیا اور پھر آفریدی کے 4 آورز میں 27 کے عوض 2 وکٹیں لے کر بنگلہ دیش کو بیک فٹ پر دھکیل دیا جس کے بعد میچ یکطرفہ صورتحال میں بدل گیا اور بنگلہ دیش مقررہ 20آورز میں 146 رنز بناسکا اور پاکستان نے بنگلہ دیش کو 55 رنز سے شکست دے دی۔ بنگلہ دیش کی جانب سے شکیب الحسن واحد بیٹسمین تھے جس نے نصف سینچری اسکور کی۔ پاکستان کی جانب سے شاہد خان آفریدی آل راونڈ پرفامنس پر مین آف دی میچ رہے انھوں نے 2 وکٹیں لیں اور بیٹنگ میں 49 رنز اسکور کیے ، اسکے اعلاوہ بالنگ میں پاکستان کی طرف سے محمد عامر نے 2, اعماد وسیم نے 1 اور عرفان نے 1 وکٹ لی۔ ۔
پاکستان ٹیم کی گزشتہ ٹی 20 سریز میں تواتر کےساتھ شکست کے بعد اتنی بڑا فتح ایک اچھی علامت ہے۔ پاکستان ٹیم کو اس فتح کی بہت ضرورت تھی بنگلہ دیش کے خلاف ہر شعبے میں اچھی پرفارمنس دے کر پاکستان نے پھر ثابت کردیا کہ پاکستان کے لیے کچھ نہیں کہا جاسکتا کہ کب کیا کرجائے ۔
پاکستان کرکٹ کو قریب سے دیکھنے اور تجزیہ کرنے والے جو بات سالوں سے کرتے آرہے ہیں شاید وہ بات ہمارے کپتان کو سمجھ آگیءہے کہ کسی بھی ٹیم کی پرفارمنس میں بہتری کے لیے ضروری ہے کہ کپتان پرفارم کرے تاکہ دیگر کھلاڑیوں کو بھی اعتماد ملے اور حوصلہ ملے۔ جب کپتان ٹیم کو فرنٹ پر آکر لیڈ کرتا ہے تو اس کا اثر نہ صرف کھلاڑیوں پر پڑتا ہے بلکہ اس سے ٹیم کی مجموعی کاکردگی پر بھی بہت بہتری نظر آتی ہے۔ پاکستان ٹیم جس گروپ میں ہے وہ ایک مضبوط گروپ ہے جس میں بہترین ٹیمیں بھارت ، اسٹریلیا اور نیوزی لینڈ شامل ہیں جنہیں شکست دینا آسان نہیں مگر ٹیم اسی طرح کا کھیل پیش کرتی رہی تو ٹورنامنٹ میں کچھ بھی ناممکن نہیں ۔ پاکستان کو آگے بھارت ،اسٹریلیا ، نیوزی لینڈ کو شکست دینی ہے تو اسی طرح جارحانہ اور زمہ دارنہ کاکردگی کو تسلسل کے ساتھ جاری رکھنا ہوگا۔

CdrCrJuXEAA2fC8.jpg

Advertisements