نادیہ مرزا صاحبہ , مغلظات آخر مہاجروں کے لیے ہی کیوں ..؟

پاکستان کی معروف اینکرپرسن نادیہ مرزا صاحبہ کا ایک کالم نظر سے گزرا تو قلم نے مجھے اس کالم کے جواب میں لکھنے پر مجبور کردیا جس کا عنوان تھا “بھوکے ننگے اور کالے کلوٹے لیکن پاکستانی ..(مطلب مہاجروں پر انھوں نے کالم یا بلاگ لکھا تھا ). جسے پڑھ کر ایسا محسوس ہوا کہ انکے دل میں مہاجروں کے لیے درد تو ہے لیکن شاید انکے قلم نے انکو دھوکہ دے دیا یا یہ حقیقت سے نظریں چرا نے کی کوشش کررہی تھیں نادیہ مرزا صاحبہ نے مہاجروں کے ساتھ پاکستان میں ہونے والی بدسلوکیوں پر بھی لب کشای کی اور اسٹیبلشمینٹ کے حلقوں کو بھی متوجہ کیا کہ وہ اداروں میں موجود کالی بھیڑوں پر بھی نظر رکھیں.

بھوکے ننگے اور کالے کلوٹے۔۔۔ لیکن پاکستانی

http://www.saach.tv/urdu/36872/

جناب نے اپنے کالم کے دوسرے ,تیسرے حصے میں ایم کیو ایم سے انکے منشور کے حوالے سے اور مہاجروں کے متعلق سوال کھڑے کردیے کہ ایم کیو ایم نے مہاجروں کے لیے کیا کیا ؟ مہاجروں کا استحصال کل بھی ہورہا تھا اور آج بھی ہورہا ہے.
جناب نادیہ مرزا صاحبہ یہ اچھی بات ہے کہ آپ نے تسلیم کیا کہ مہاجروں کا مستقل استحصال ہورہا ہے جو کہ انکے ساتھ زیادتی ہے.لیکن آپ نے جس طرح حقایق کو شفافیت سے بیان کرنے کے بجاے اس کا ملبہ متحدہ قومی موومینٹ پر تھوپنے کا تاثر دیا یہ غلط تھا جس طرح آپ نے کہا کہ “علم و ادب ,تہزیب و تمدن ,اعلی شاعری جو ہندوستان سے ہجرت کرنے والے مہاجروں کا اثاثہ اور پہنچان تھی وہ آج ابے تبے اوے ,عامر سر پھٹا ,اجمل پہاڑی ,عبید کے ٹو اور فیصل موٹا جیسے القابات کے پیچھے گم ہوگی ہیں .جناب کیا یہ سب القابات متحدہ قومی موومینٹ کے تخلیق کردہ ہیں ؟
آج بھی اردو بولنے والوں کی بہت بڑی اکثریت متحدہ میں شامل ہے جو اج بھی بانیان پاکستان کی پہچان اور انکی خصوصیات کو آگے لیکر چل رہے ہیں. جیسے فاطمہ ثریا بجیہ , عمر شریف , فرقان طاہر صدیقی و دیگر بے شمار ایسی شخصیات آج بھی موجود ہیں جنھوں نے ملک و قوم کا نام دنیا میں روشن کیا.جہاں آپ نے مہاجروں پر اور ایک خاص جماعت تنقید کا نشانہ بنانے کے لیے عبید کے ٹو و دیگر کے نام لیے آپ شاید بھول رہی ہیں یہ نام ہم نے صرف پولیس و دیگر قانون نافز کرنے والوں سے ہی سنے ہیں یہ کوی انکے نام نہیں جنھیں آپ قلم بند کرکے مہاجروں کی شناخت کا طنز کررہی ہیں .
محترمہ جہاں تک بات متحدہ قومی موومینٹ کے حکومت میں رہنے کی ہے تو آپ کے علم میں ہوگا کہ کراچی و سندھ کے شہریوں کا کس طرح کوٹہ سسٹم کی آڑ میں معاشی قتل عام کیا جاتا ہے اور سندھ کے اردو بولنے والوں کو دوسرے درجے کا شہری جیسا سلوک کیا جاتا ہے تو یہ وجہ ہے کہ متحدہ کو ماضی میں اپنے ووٹرز کے مسایل کے حل کے لیے حکومت میں رہنا پڑا جس کی مثال کراچی کے موجودہ حالات ہیں ایم کیو ایم سندھ اسمبلی میں آپوزیشن میں ہے اور یہ ہی وجہ ہے کہ آج کراچی میں پانی کا مصنوعی بحران پیدا کرکے کراچی کے عوام کو پانی کے لیے ترسایا جارہا ہے ایم کیو ایم کے نمایندوں کے حلقوں میں موجود عوام کو زہنی ازیت دی جارہی ہے.ہم نے ماضی میں دیکھا ہے کہ نواز شریف صاحب , عمران خان , اور آصف علی زرداری نے الیکشن مہم کے دوران کراچی میں ترقیاتی کاموں اور کراچی کی عوام کو درپیش مسایل کے حل کا وعدہ تو کیا مگر آج تک انکے مسایل جوں کے توں ہیں کیا وہ کراچی کے عوام سے جھوٹا وعدہ کرکے پورے پاکستان سے ووٹ حاصل کرسکتے ہیں ؟ آج کراچی کی عوام دیکھ رہی ہے کہ کراچی کے مسایل کے حل کے لیے کوی جماعت سنجیدہ ہے تو وہ صرف ایم کیو ایم ہی ہے جو شہر اس ملک کو 70 فیصد کما کر دیتا ہو اسکے بغیر نہ تو حکومت بننا چاہیے اور نہ ہی اس کے بغیر ملک کے معاشی و دفاعی فیصلے ہونا چاہیے.اس شہر کی بدقسمتی ہے کہ اسی شہر کے لوگ حقیقت سے آشنا ہونے کے باوجود اسی شہر کے خلاف بولتے ہیں
الطاف حسین نے ہمیشہ محکوم و مظلوم عوام کے لیے آواز اٹھای ہے جس کی مثال بنگلہ دیش میں محصور پاکستانی ہیں کبھی کسی نے انکی واپسی کے لیے کوی اقدام کیا ہے ؟ الطاف حسین کے اعلاوہ کسی نے انکے لیے کوی آواز بلند نہیں کی..کیا کبھی آپ نے ایک ٹی وی شو کرنا بھی پسند کیا ہے انکے لیے ؟
جناب پاکستان میں پچھلی دو دہایوں سے مہاجروں کا خون بہایا جارہا ہے کیا کبھی آپ نے یا کسی اینکر نے اس بات پر آواز اٹھای ہے ؟ چاہے سانحہ پکا قلعہ حیدرآباد ہو, قصبہ و عالیگڑھ کالونی , سانحہ 31 اکتوبر ہو یا 19 جون 1992 کے آپریشن میں شہید ہونے والے مہاجرہوں , کبھی کسی اینکر نے انکی شہادتوں پر کوی ٹاک شو کیا ؟کبھی ان شہیدوں کی حکومتی سطح پر مدد کی گئی ؟ .یہ تاثر بالکل غلط ہے کہ ایم کیو ایم اپنے کارکنوں کو اسمبلیز کے ٹکٹ دیتی ہے. ایم کیو ایم اس بنیاد پر کسی کو اسمبلیز کا ٹکٹ نہیں دیتی کہ وہ ایم کیو ایم کا کارکن ہے بلکہ حقیقت تو یہ ہے کہ ایم کیو ایم صوبای و قومی اسمبلی کے لیے ٹکٹ عام عوام میں سے ایسے شخص کو دیتی ہے جو قابلیت و اہلیت رکھتا ہو مگر اسکی اتنی حیثیت نہ ہو کہ وہ الیکشن لڑ سکے تو ایم کیو ایم اسے اپنے پلیٹ فارم سے الیکشن لڑنے کا موقع دیتی ہے جس کی ہزاروں مثالیں موجود ہیں. متحدہ پر ہمیشہ لوگوں نے الزام لگاے مگر آج تک کوی الزام عدالت میں ثابت نہ ہوسکا.
جناب نادیہ مرزا صاحبہ آپ ایک خاتون ہیں کیا آپکا حق نہیں کہ آپ اپنے ووٹ کا حق استعمال کریں؟ اگر آپ کا حق ہے تو پختونخواہ و دیگر قبایلی علاقوں میں کسی خاتون کو ووٹ ڈالنے کا حق کیوں حاصل نہیں ؟چند روز قبل پختونخواہ کے ضلع دیر میں ضمنی انتیخاب کے دوران عورتوں کو ووٹ ڈالنے نہیں دیے گے جس میں عوامی نیشنل پارٹی , پاکستان تحریک انصاف , جماعت اسلامی و دیگر سیاسی جماعتوں نے مل کر فیصلہ کیا کہ دیر کے ضمنی انتیخاب میں عورتوں کو ووٹ کاسٹ کرنے کی اجازت نہیں ہوگی ..

جناب آپ نے یا آپ کے چینل نے ان جماعتوں سے اس حوالے سے کوی سوال کیا ؟ ان جماعتوں کی سوچ کا عکس ہم نے دیر کے ضمنی انتیخابات میں دیکھ لیا ہے تبدیلی کا نعرہ لگانے والوں نے کس طرح عورتوں کو پختونخواہ میں اپنے بنیادی حق سے محروم رکھا .. بہت سے اینکرپرسنز ایم کیو ایم پر جھوٹے الزامات کو عوام تک ایسے پہنچاتے ہیں جیسے وہ حقیقت بیان کررہے ہوں مگر کوی اس بات کو لیکر کوی پروگرام نہیں کرتا کہ اگر کوی صحیح معینوں میں خواتین کے حقوق اور انکے احترام کی بات کرتا ہے تو وہ صرف الطاف حسین اور ایم کیو ایم ہے. ایم کیو ایم و دیگر جماعتوں میں فرق واضح ہے کہ دوسری جماعتیں عوام سے انکے حقوق ضبط کرنا چاہتی ہیں اور ایم کیو ایم عوام کے بنیادی حقوق عوام تک پہنچانا چاہتی ہے..
جناب یہ حقیقت ہے کہ جب بھی کسی اینکر نے یا کالم نگار تجزیہ نگار نے اردو بولنے والے مہاجروں یا انکی نمایندہ جماعت کے لیے کچھ بھی لکھا تو ہمیشہ منفی ہی لکھا .. ایسا کیوں ؟
کیا مہاجروں کی نمایندہ جماعت کے اعلاوہ سب فرشتے ہیں ؟
کبھی کوی تجزیہ نگار کالم نگار یا اینکر پرسن اس پر لب کشای کیوں نہیں کرتا کہ ایم کیو ایم کے جو مہاجر کارکنان ماوراے عدالت قتل ہوے اس کا زمہ دار کون ہے ؟
نادیہ صاحبہ کبھی اس پر بھی اپنا نقطہ نظر پیش کیجیے کہ پچھلے 30 سالوں سے ایم کیو ایم کے مہاجر کارکنان کو ہی کیوں نشانہ بنایا جارہا ہے ؟ ماوراے عدالت قتل کا سہرا کس کو جاتا ہے ؟کبھی کسی نے مہاجروں کے حق کے لیے کیوں آواز نہیں اٹھای ؟ ایم کیو ایم کے سینکڑوں کارکنان لاپتہ ہیں کوی اردو بولنے والوں کا خیر خواہ ہے پاکستان میں سواے ایم کیو ایم کے؟جناب آپ اس پر کوی ٹاک شو کیوں نہیں کرتی کہ ہر بار مہاجروں کو ہی کیوں ننگے بھوکے, کالے کلوٹے , مکڑ , بھگوڑے اور را کے ایجینٹ جیسے مغلظات و الزام کا سامنا کرنا پڑتا ہے آپ کے اجداد نے بھی انڈیا سے ہجرت کی ہوگی کیا آپ کو یہ گالیاں محسوس نہیں ہوتیں ؟آپ کو احساس نہیں ہوتا جب کوی ہمارے اجداد کی قربانیوں کے صلے میں انکی اولادوں کو مغلظات سے پکارے ؟
جناب یہ بات حقیقت ہے کہ مہاجروں کو آج بھی بہت سی مشکلات کا سامنا ہے مگر اس بات کو بھی یاد رکھیے کہ ایم کیو ایم کے قیام سے پہلے مہاجروں کے پاس آواز بلند کرنے کا کوی پلیٹ فارم نہ تھا سب بکھرے ہوے تھے مگر آج الطاف حسین صاحب نے مہاجروں کو ہمت دی اور اپنا پلیٹ فارم دیا اور سب کو متحد کیا.الطاف حسین کا پیغام حق و سچ کا پیغام ہے جو مہاجروں تک محدود نہیں بلکہ پاکستان کی تمام قومیت تک پھیل چکا ہے اور اب الطاف حسین صاحب صرف مہاجر ہی نہیں سب کے قاید ہیں.
امید کرتا ہوں نادیہ مرزا صاحبہ آنے والے دنوں میں آپ مہاجروں کے ماوراے عدالت قتل پر بھی کوی کالم یا نقطہ نظر پیش کرینگی اور محصور پاکستانیوں ,کوٹہ سسٹم , کراچی و حیدرآباد میں لوکل گورنمنٹ کی عدم موجودگی , ترقیاتی منصوبوں کے لیے بجٹ کی عدم فراہمی , بجلی و پانی کے مسایل پر بھی ٹاک شوز کرکے پاکستان کی عوام کے دلوں میں کراچی کے مسایل کے حل کے لیے راے ہموار کرینگی ..
آپ جیسے لوگ بھی عوام تک حقیقت نہیں پہنچاے گے تو اس ملک کی صحافت کا خدا ہی حافظ ہے.
    

Advertisements