imagesf

imagesdasde                                      imagesdsf

اگر فینز ہی کرکٹ میں ایک عظمت کا نشان ہے تو پاکستانی آل راؤنڈر سپر اسٹار شاہد خان آفریدی کو دنیا کے عظیم ترین کھلاڑیوں میں شمار کیا جاسکتا ہے.1996 میں سری لنکا کے خلاف نیروبی میں اپنے دوسرے ون ڈے انٹرنیشنل میں 37 گیندوں پر 102 رنز بنا کر کرکٹ کی تاریخ کی تیز ترین بنانے والے پہلے کھلاڑی بن گئے تھے اور یوں اپنے کرکٹ کی دنیا میں تاریخ رقم کرکے اپنا بہترین سفر کا آغاز کیا اور اپنے دوسرے ہی ون ڈے میں پرفارمنس دے کر پاکستان کی ایک اہم شخصیت بن گئے.شاہد خان آفریدی کا قائم کردہ تیز ترین سنچری کا ریکارڈ 16 سال تک برقرار رہا جو 2014 میں کیوی بیٹسمین کوری اینڈرسن نے بریک کیا اور پھر 2015 میں افریقی بیٹسمین اے بی ڈی ولیرز نے کوری اینڈرسن کا تیزترین سنچری کا ریکارڈ بریک کردیاہے مگر شاہد خان آفریدی کا تیزترین سنچری کا ریکارڈ اپنی ایک الگ اہمیت رکھتا ہے. آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کی سرزمین  پر عالمی کرکٹ میلہ ہونے جارہا ہے اور 2015 کے کرکٹ وڑلڈکپ سے قبل شاہد خان آفریدی نے یہ اعلان کردیا ہے کہ  وہ وڑلڈکپ 2015 کے بعد  ون ڈے کرکٹ سے ریٹائر ہوجائے گے  اور صرف ٹی 20 میں پاکستان کو اپنی خدمات دینگے.اس اعلان کے  شاہد آفریدی کے کروڑوں مداح اس کشمکش میں مبتلا ہیں کہ وہ اب اپنے اسٹار آل راؤنڈر کو کیسے دیکھیں گے؟

    indexg    imageshgfgh

خبر رساں ادارے اےایف پی کے مطابق پاکستان میں کسی کرکٹر کو اتنی پزیرائی نہیں ملی جتنی شاہد آفریدی کو ملی ہے.آفریدی وہ کھلاڑی ہیں جن کی وجہ سے اسٹیڈیم شائقین سے بھر جاتا تھا  اور انکے نہ ہونے سے اکثر خالی بھی نظر آتا تھا.
انکو دیکھنے کے لیے مداحوں میں کافی جوش و خروش پایا جاتا ہے. لڑکیاں آفریدی کی ایک جھلک دیکھنے کو بے تاب ہوتی ہیں اور بہت سی ان سے شادی کی خواہش مند ہیں.سال 2004 میں دو خواتین عروسی ملبوسات میں اسٹیڈیم آئیں اور صرف اس شرط پر جانے کے لیے تیار ہوئی کہ انھیں آل راؤنڈر سپر اسٹار سے روبرو معلاقات کا موقع دیاجاے.
پاکستانی اسٹار آل راونڈر نے اپنے منفرد اسٹائل سے اپنے فینز کے دل جیت لیے ہیں.یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ الیکٹرانک میڈیا اور  شاہد خان افریدی کا کیریر  ایک ساتھ پروان چڑھا جسے 2002 میں سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کے دور میں مزید فروغ ملا. کرکٹ پر لکھنے والے مصنف سمیع الدین صاحب کا کہنا ہے کہ آفریدی کو ملنے والی مقبولیت کا کسی بھی دور میں مقابلہ نہیں کیا جاسکتا.سمیع الدین صاحب کے مطابق انھوں نے ایک ایسے وقت میں کھیلنا شروع کیا جب تیزی سے فروغ پاتے ہوۓ الیکٹرانک میڈیا نے بھی انھیں سابق کھلاڑیوں عمران خان ،.وسیم اکرم،اور وقار یونس کی طرح ایک بڑا اسٹار بنانے میں  مدد فراہم کی. آفریدی کا اثر پاکستان کی گلیوں میں کھیلی جانے والی کرکٹ پر بھی دیکھا جاسکتا ہے.آفریدی کی شہرت نے انھیں پاکستان کا چہرہ بنادیا ہے.ان کی پسندیدگی کا اظہار اس بات سے بھی ہوتا ہے کہ ہربل بورڈ یا ٹی وی کمرشل میں  انھیں دیکھا جاسکتا ہے. اب اپنے کیریر کے اس موڑ پر بھی آفریدی کو شیمپو سے لیکر اسکن کریم و دیگر اشتہارات  میں  دیکھا جاسکتا ہے

6-Top-WicketTakers-in-Each-World-Cupsdfs 10933849_938869086123761_2388274141541729312_n

 10937430_785337054885965_1721387771_n   imagestetf dy

ایسی شہرت اگر کرکٹ کی تاریخ میں بھارت کے لٹل ماسٹر سجن ٹنڈولکر کے اعلاوہ کسی کو ملی ہے تو وہ شاہد خان افریدی ہے.کراچی کے مشہور ایڈورٹائزنگ ایجنسی کیلیے کام  کے  کرنے والے کامل  احمد کا کہنا ہے کہ “آفریدی اسٹار پرفارمر رہے نہ رہے لیکن وہ سپر اسٹار ضرور رہینگے. پاکستان کے 34 سالہ  آل راونڈر کو اپنے کرکٹ کیریر میں بہت سے نشیب و فراز دیکھنا پڑے لیکن 2010 میں کپتان بننے کے بعد انکی مقبولیت  میں  مزید اضافہ ہوا.شاہد آفریدی نے ایک خبر رساں ایجنسی کے نمایندے سے گفتگو  کے دوران مسرت کا اظہار کرتے ہوۓ کہا کہ “میں خوش قسمت ہوں کہ لوگ مجھے کسی بھی دوسرے فرد سے زیادہ محبت دیتے ہیں جو ایک بہت بڑی نعمت ہے. آفریدی کے بلے سے لگتے چوکوں اور چھکوں اور جارحانہ انداز نے پاکستان کو بہت سی کامیابیوں سے ہمکنار کیا اور پھر  بولنگ کی باری آئی تو اپنی  اوسط اور نپی تلی  باولنگ سے  اپنی حریف ٹیموں کو پریشان کیا.جہاں اچھی کارکردگی پر سراہا گیا وہیں خراب پرفارمنس پر تنقید کا نشانہ بھی بنایاگیا مگر  اچھی بری پرفارمنس کھیل کا حصہ ہے .  شاہد آفریدی نے 389 ایک روزہ میچوں میں 391 لی اور  38 نصف سنچری اور 6 سنچریز کی مدد سے 7870رنز بنا چکے ہیں، .آئندہ ماہ شروع  ہونے والے عالمی کپ  میں انکی پرفارمنس  جیسی بھی ہو ایک بات تو   طے ہے کہ  کرکٹ شائقین کو آفریدی جیسا اسٹار پرفارمر دیکھنے کا موقع بہت عرصے بعد ملے گا دیکھنا یہ ہے کہ آفریدی کے بعد کون  پاکستان کا اگلا سپر اسٹار ہوگا اور کون آفریدی کی  کمی کو  پورا  کرے گا کیونکہ شاہد خان  آفریدی نے اعلان کردیا ہے کہ وہ 2015 کے وڑلڈکپ کے بعد ایک روزہ کرکٹ سے  ریٹائرڈ ہوجائے گے امید ہے شاہد آفریدی اپنے آخری ایونٹ  میں بھی اچھی پرفارمنس دے کر اس میگا ایونٹ کو تاریخی  بنادینگے.

index    indexhyh

Advertisements