imagesfdfdgdf   imag,

imageshlk

اسرائیل کی حکومت نے معصوم فلسطینیوں پر زندگی تنگ کردی، سفاکیت و بربریت کا کھیل جاری ہے اسرائیل کی فضائیہ کی شدید بمباری سے شہادتوں کی تعداد 600 سے تجاوز کرگی ہے اور نہ جانے کتنے زخمی ہیں اقوام متحدہ نے فریقین سے جنگ بندی کی اپیل کی ہے مگر محسوس ہوتا ہے جیسے اقوام متحدہ بھی اسرائیل کے اگے بے بس ہے عالمی دباؤ کے باوجود اسرائیل کے وزیراعظم نیتن یاہو کا کہنا ہے کہ عالمی دباو کے باوجود نہتے فلسطینیوں پر حملے جاری رہینگے اسرائیلی حکومت گزشتہ کئ روز سے اپنے فضائیہ اور بحریہ کی مدد سے مسلسل بمباری کر کے  فلسطینی عوام پر ظلم و بربریت کرنے میں مصروف ہے غزہ ،فلسطین کے ہرگھر سے جنازے اٹھ رہے ہیں غزہ میں ہر طرف دھویں آگ اور راکھ کے بادل اڑتے نظر آرہے ہیں مگر کسی کو نہتے عوام  پر  ترس نہیں آرہا اور دوسری طرف اسرائیلی فضائیہ جنگی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شہری آبادیوں کو نشانہ بنا رہی ہے سینکڑوں گھر  ملبے کے ڈھیر  میں تبدیل ہوچکے ہیں عورتیں بچے بڑے بوڑھے سب کھلے آسمان تلے رات گزارنے پر مجبور ہیں فلسطینی صدر محمود عباس نے اسرائیلی جارحیت اور بمباری کو  فلسطینیوں کی نسل کشی قرار دیا اور عالمی برادری سے اپیل کی کہ اسرائیلی جارحیت اور مظالم کو رکوایا جاۓ جس کے بعد  اقوام متحدہ کی 15 رکنی سلامتی کونسل کی کمیٹی نے بیان جاری کیا جس میں اقوام متحدہ نے پھر فریقین سے جنگ بندی  کی اپیل  کی اور اسرائیلی حملوں میں نہتے شہریوں کی ہلاکتوں پر تشویش کا  اظہار کیا  مگر  افسوس کہ 600  سے زائد نہتے فلسطینیوں کی شہادتوں کے باوجود  اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل تشویش سے باہر نہیں آسکی ہے اور اب تک اسرائیل کے مظالم بند نہیں ہوسکے

imagesnjm,imagesjjkjl

index

اسرائیل کی درندگی کے خلاف  انسانی حقوق کی تنظیموں اور انسانی حقوق کے علمبردار ممالک کی خاموشی  ایک سوالیہ نشان بن چکی ہے؟ کیا  عالمی انسانی حقوقِ کی تنظیمیں اسرائیل کے مظالم کے حق میں ہیں ؟ اور یہاں جو کردار مسلم ممالک کو ادا کرنا چاہئیے کیا  وہ اپنا کردار ادا کررہے ہیں؟؟ ماسوائے چند ممالک کے  دیگر  مسلم ممالک اسرائیل کی اس بربریت کے خلاف کیوں نہیں   کہہ رہے ؟؟ یہ  وقت امت مسلمہ کے  یکجا ہونے کا ہے . او آئی سی ،عرب لیگ اور  دیگر مسلم  ممالک کہاں ہیں  یہ کب اپنی آنکھیں کھولے گے؟؟ پاکستان کے سیاسی جماعت کے قائد الطاف حسین واحد لیڈر ہیں جو اسرائیل کی بربریت کو  کھلی دہشت گردی اور عالمی قوانین کی خلاف ورزی قرار دے رہے ہیں اور یہ ہی نہیں بلکہ  انکی جماعت ایم  کیو ایم نے بھی اپنے قائد کی آواز پر لبیک کہا اور  فلسطین کی عوام سے یکجہتی اور  اسرائیل کی بربریت کے خلاف احتجاج ریکارڈ کرواے . ایم کیو ایم کی طلبہ تنطیم اے پی ایم ایس او  کےتحت غزہ کے  شہیدوں کے لیے  شمع روشن کرکے فلسطین کے  عوام کے لیے دعایئہ اجتماع منعقد کیے  گئے جس میں طلبہ نے بھرپور شرکت کی.الطاف حسین  نے غزہ اور فلسطینی عوام  کے درد کو محسوس کرتے ہوۓ  نہ صرف آواز اٹھای بلکہ اسرائیلی جارحیت کو رکوانے کے لیے اقوام متحدہ کے جنرل سیکریٹری بان  کی مون  صاحب کو خط بھی لکھا اور  کئ مرتبہ مسلم  ممالک کو  جھنجھوڑ نے کی کوشش کہ آج فلسطین ہے تو  کل دوسرے مسلم ممالک  کا بھی نمبر آسکتا ہے مگر کوئی سمجھنے کو تیار نہیں اور المیہ  تو  یہ ہے کہ فلسطین میں اسرائیل کے ہاتھوں انسانی حقوق کے قوانین کی خلاف ورزی پر یورپ  کے چند ممالک تو جاگ اٹھے ہیں اور وہ فلسطین کے حق میں سڑکوں پر بھی جمع ہوۓ مگر ہمارے مسلم ممالک  عرب لیگ اور او آئی سی ارکان  کب انسانیت کے لیے کھڑے ہونگے؟؟

imagesjg nmbn imagesdgfbg

10525835_787257101324973_6037765763575603623_n 10516808_342769329208351_8367463596552561264_n

پاکستان کی تیسری بڑی جماعت متحدہ قومی موومینٹ کے قائد جناب الطاف حسین صاحب نے معصوم فلسطینیوں کےلئے آواز بلند کرکے پاکستان کے دیگر سیاسی جماعتوں  کے سربراہان کو بھی حوصلہ دیا جس کے بعد عمران خان صاحب  اور دیگر سیاسی جماعتوں کے سربراہان نے بھی فلسطینیوں کے لیے آواز اٹھائی اور یکجہتی کا اظہار کیا آج فلسطین پر اسرائیل نے قیامت صغراں برپا کی ہوئی ہے اور روز اسرائیل فلسطین میں انسانی حقوق کو پامال کر رہا ہے اس پر مسلم امہ کی خاموشی ہمارے مسلمان اور  انسان ہونے پر سوالیہ نشان ہے .خدارا ہمارے مسلم امہ کو خواب غفلت سے بیدار کردے اور ہمیں ایک دوسرے کے دکھ درد کو سمجھنے والا انسان اور پھر مسلمان بنادے آمین  .اے اللہ فلسطین کو اسرائیل کی مزید بربریت اور دہشت گردی سے بچا اور مسلم امہ کو متحد ہونے کی توفیق عطا فرما.(آ مین)

Advertisements